بھارت کے لیے فضائی حدود بند کرنے کا فیصلہ ۔۔۔ شاہ محمود قریشی نے بڑا اعلان کر دیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ بھارت کے لیے فضائی حدود بند کرنے کا فیصلہ مناسب کیا جائے گا۔پارلیمنٹ ہاؤس میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارت کے لیے فضائی حدود کی بندش ایک آپشن ہے جس کے فوائد اور نقصانات پر

 

غور کررہے ہیں۔وزیر خارجہ نے کہا کہ فضائی حدود کی بندش کے حوالے سے فیصلہ مناسب وقت پر کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ رائے عامہ قائم ہوتی ہے، میں تو چاہتا ہوں میرے پاس الہ دین کا چراغ ہو اور سب کچھ ٹھیک ہوجائے، بجلی کا بٹن آپ کے پاس نہیں میرے پاس بھی نہیں لیکن مقبوضہ کشمیر کے سلسلے میں جو انسانی حد تک ہوسکتا ہے ہم کررہے ہیں۔وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل، یورپی یونین گئے اور اب ہم مقبوضہ کشمیر کا معاملہ انسانی حقوق کونسل میں لے کر جارہے ہیں۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہم اسلامی تعاون تنظیم ( او آئی سی ) میں رابطے کررہے ہیں، او آئی سی کے دو اہم ارکان کل پاکستان آرہے ہیں اور ان سے مقبوضہ کشمیر کے معاملے پر تفصیلی گفتگو ہوگی۔انہوں نے کہا کہ اس وقت لندن میں ہزاروں کی تعداد میں پاکستانی، کشمیری، انسانی حقوق کے سرگرم کارکن مقبوضہ کشمیر میں مظالم کے خلاف احتجاج کررہے ہیں۔وزیر خارجہ نے کہا کہ برطانیہ کی لیبر پارٹی کے سربراہ جیرمی کوربن نے مقبوضہ کشمیر کے حوالے سے بیان دیا، اسی طرح امریکا کے بہت سے سینیٹرز اور کانگریس ارکان نے پہلی مرتبہ کشمیر کا معاملہ انسانی حقوق کمیٹی میں بات چیت کرنے کا فیصلہ کیا۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بین الاقوامی اور مغربی میڈیا بھارت کی اس پالیسی پر تنقید کررہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ دفتر خارجہ میں کشمیر سیل بنانے قائم کیا جائے گا جہاں کشمیر کا معاملہ اجاگر کرنے کے لیے پالیسی تشکیل دی جائے گی۔

 

وزیرخارجہ کا ترک، ایرانی اور بنگلہ دیشی ہم منصبوں سے رابطہاس سے قبل وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے ترکی، ایران اور بنگلہ دیش کے وزرائے خارجہ سے ٹیلی فونک رابطہ کیا تھا اور مقبوضہ کشمیر کی موجودہ صورتحال پر تبادلہ خیال کیا تھا۔ترک، ایرانی اور بنگلہ دیشی ہم منصبوں سے فون پر علیحدہ علیحدہ گفتگو میں وزیر خارجہ نے انہیں مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں اور خطے میں امن و امان کی مخدوش صورتحال سے آگاہ کیا۔وزیر خارجہ نے بنگلہ دیش کے ہم منصب عبدالکلام عبدالمومن سے رابطہ کیا اور بھارت کے یہ یکطرفہ اور غیر آئینی اقدامات پورے خطے کے امن و امان کیلئے شدید خطرات پیدا کر سکتے ہیں۔بنگلہ دیشی وزیر خارجہ نے مقبوضہ کشمیر کی المناک صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے معاملات کے پر امن حل کی ضرورت پر زور دیا۔شاہ محمود قریشی کا ایرانی وزیر خارجہ کو فونوزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ایران کے وزیر خارجہ جواد ظریف سے ٹیلیفونک گفتگو میں کہا کہ بھارت نے گزشتہ 4 ہفتوں سے مقبوضہ کشمیر میں مسلسل کرفیو نافذ کیا ہوا ہے۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں عروج پر ہیں۔انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی میڈیا اور انسانی حقوق کی تنظیمیں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کا پردہ چاک کررہی ہیں۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال اس قدر تشویشناک ہے کہ خوراک اور ادویات تک میسر نہیں ہیں۔وزیر خارجہ نے کہا کہ بھارت اپنے یکطرفہ اقدامات سے پورے خطے

 

کے امن و امان کو تہس نہس کرنے پر تلا ہوا ہے۔انہوں نے کہا کہ رات کی تاریکی میں بچوں اور نوجوانوں کو جبراً اغواء کر کے بدترین تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، یہ صورتحال ایک نئے انسانی المیے کی نشاندھی کر رہی ہے۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر کے نہتے مسلمان بھارتی مظالم سے نجات کے لیے، اقوام عالم بالخصوص مسلم امہ کی طرف دیکھ رہے ہیں۔ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایسے اقدامات سے خطے میں کشیدگی میں مزید اضافہ ہوگا۔وزیر خارجہ کا ترک ہم منصب سے ٹیلیفونک رابطہوزیر خارجہ شاہ محمود قریشی مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر نے اپنے ترک ہم منصب میولود چاوش اوغلو کو فون کیا۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان اور ترکی کے مابین دیرینہ تاریخی،سماجی اور ثقافتی برادرانہ تعلقات ہیں۔انہوں نے کہا کہ خطے سے متعلقہ اہم امور پر پاکستان اور ترکی کے نقطہ نظر میں خاصی مماثلت رہی ہے اور دونوں ممالک نے مشکل گھڑی میں ایک دوسرے کا ساتھ دیا۔وزیر خارجہ نے کہا کہ بھارت نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں 5 اگست سے مسلسل کرفیو نافذ کر رکھا ہے جس کے باعث لاکھوں انسانوں کی زندگیوں کو شدید خطرات لاحق ہیں۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ اتحاد بین المسلمین کے لیے ترکی کی خدمات قابلِ تحسین ہیں، مقبوضہ جموں و کشمیر کے نہتے مسلمانوں کے حق میں آواز بلند کرنے پر ہم ترک صدر کے شکرگزار ہیں۔ٹیلیفونک گفتگو میں دونوں وزرائے خارجہ نے دو طرفہ مشاورت جاری رکھنے، اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس اور اسلامی تعاون تںظیم ( او آئی سی) رابطہ گروپ برائے کشمیر کے اجلاس میں ملاقات پر اتفاق کیا۔مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہخیال رہے کہ بھارت کی حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) نے 5 اگست کو صدارتی فرمان کے ذریعے آئین میں مقبوضہ کشمیر کو خصوصی حیثیت دینے والی دفعہ 370 کو منسوخ کرنے کا اعلانکردیا تھا، جس کے بعد مقبوضہ علاقہ اب ریاست نہیں بلکہ وفاقی اکائی کہلائے گا جس کی قانون ساز اسمبلی ہوگی۔آئین میں مذکورہ تبدیلی سے قبل دہلی سرکار نے مقبوضہ کشمیر میں سیکیورٹی اہلکاروں کی نفری کو بڑھا دیا تھا، بعدازاں مقبوضہ وادی میں کرفیو نافذ کرنے کے بعد کسی بھی طرح کی نقل و حرکت پر پابندی عائد کردی گئی تھی۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.

izmir escort
php shell
sakarya escort adapazarı escort beylikdüzü escort esenyurt escort istanbul escort beylikdüzü escort istanbul escort avcılar escort beylikdüzü escort şişli escort
istanbul escort bayan bilgileri istanbul escort ilanlari istanbul escort profilleri hakkinda istanbul escort sitesi istanbul escort numaralari istanbul escort fotograflari istanbul escort bayanlarin iletisim numaralari istanbul escort aramalari yapilan site istanbul escort istanbul escort
ısparta escort bayan profilleri bilecik escort ilanları edirne escort kadınlarının profilleri bolu escort numaraları kırşehir escort fotoğrafları burdur escort bayanların telefon numaraları ayvalık escort bayan ilanları amasya escort profilleri adapazarı escort bayan numaraları çorlu escort sitesi hakkında rize escort zonguldak escort ilanları trabzon escort bayan ilanları ve profilleri edirne escort