برطانوی نژاد بہنوں کی ہلاکت پر تیسری بہن کا اہم بیان آ گیا

برطانوی نژاد بہنوں کی ہلاکت پر تیسری بہن کا اہم بیان آ گیا

موت سے چند گھنٹے قبل ہم فون پر ہنسی مذاق کر رہے تھے،واقعہ غیرت کے نام پر قتل کا نہیں،بہنوں کی پاکستانی لڑکوں سے شادی ہوئی، ناکامی پر والد نے خود طلاق کا انتظام کیا۔ ساریا رحمان
گجرات گذشتہ ہفتے 2 برطانوی نژاد بہنیں گیس لیکج کے باعث واش روم میں دم توڑ گئی تھیں۔دونوں لڑکیوں کی اچانک موت کے بعد کئی سوالات بھی اٹھے۔اسی حوالے دونوں لڑکیوں کی تیسری بہن ساریا رحمان نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ دونوں اپنی موت سے صرف چند گھنٹے قبل ان سے فون پر بات کرتے ہوئے ہنسی مذاق کر رہی تھی۔
ساریا رحمان نے مزید بتایا کہ نادیہ کو گھومنے پھرنے کا شوق تھا جب کہ ماریہ ان کے لیے دوسری ماں کی حیثیت رکھتی تھی۔ان کا کہنا تھا کہ میری ان سے رات میں ہی فون پر بات ہوئی اور ہم ہنسی مذاق کر رکے تھے لیکن جب دونوں کی موت کی خبر ملی تو یقین کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ساریا نے مزید بتایا کہ دونوں بہنوں میں بہت زیادہ قربت تھی اور وہ ہر ایک کام ساتھ کیا کرتی تھیں۔
انہوں نے بتایا کہ ان کی بڑی بہن ماریہ ہمیشہ ان کا خیال رکھتی تھی۔وہ نوکری کرتی تھیں اور ساتھ ساتھ ماڈلنگ بھی شروع کر دی تھی کیونکہ انہیں بننا سنورنا بہت پسند تھا۔چھوٹی بہن نادیہ کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ کالج کی طالبہ تھی اور ان کا خواب تھا کہ وہ ٹیچر بنیں اور پوری دنیا گھومیں۔سوشل میڈیا پر بہنوں کو غیرت کے نام پر قتل کرنے کی خبروں کی تردید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ غیرت کے نام پر قتل ہونے کا واقعہ نہیں ہےاس میں کوئی سچائی نہیں ہے۔
دونوں بہنوں کی شادی پاکستانی لڑکوں سے ہوئی تھی۔شادی کی ناکامی پر ان کے والد نے خود طلاق کا انتظام کیا۔ساریا نے اپنے بارے میں بھی بتایا کہ ان کی پسند کی شادی ہے اور ان کی والدین نے پوری طرح ان کی حمایت کی اور آزادی دی۔خیال رہے کہ گجرات کے علاقے دولت نگر میں برطانوی نژاد 2 بہنیں پراسرار طور پر ہلاک ہوگئی تھیں۔پولیس کے مطابق 18 سالہ نادیہ اور 25 سالہ ماریہ باتھ روم میں مردہ پائی گئیں۔
دونوں بہنیں 10 روز قبل لندن سے پاکستان آئیں تھیں، واش روم میں مردہ پائی جانے والی دو بہنوں کی پوسٹ مارٹم رپورٹ کے مطابق دونوں لڑکیوں کی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں موت کی وجہ دم گھٹنا ہی تھی۔پورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ لاشوں کو موت کے تقریبا 26 گھنٹے بعد اسپتال لایا گیا۔دونوں بہنوں کے جسم پر تشدد کے کوئی نشان نہیں ملے۔دونوں کے جسم پر کوئی سوجن یا خراش بھی نہیں تھی۔ لڑکیوں کے معدے، پھیپھڑوں اور دل میں زہر کے اثرات دکھائی نہیں دئیے۔ والدین کے مطابق دونوں لڑکیوں کی ہلاکت باتھ روم میں لگے گیزر سے گیس خارج ہونے سے ہوئی۔ ایس ایچ او خاور گوندل نے بتایا کہ واقعہ 12 جنوری کو پیش آیا ہے، والدین نے قانونی کارروائی سے انکار کردیا تھا۔

[X]