ضلع میرپور میں غیر رجسٹرڈ تعلیمی اداروں کی بھر،طلباء کا مستقبل داؤ پر

ضلع میرپور میں غیر رجسٹرڈ تعلیمی اداروں کی بھر،طلباء کا مستقبل داؤ پر

میرپور(بحوالہ آوازہ نیوز) آزادکشمیر میں شعبہ تعلیم پر چیک اینڈ بیلنس نہ ہونے کی وجہ سے نظام تعلیم تباہی کے دھانے پر، نوجوان نسل تعلیم کے سوداگروں اور ٹھیکیداروں کے رحم کرم پر، غیر رجسٹرڈ تعلیمی اداروں کی بھرمار، ان ٹرینڈ کم تعلیم یافتہ سٹاف،ڈربہ نما سکولوں میں ناکافی تعلیمی سہولیات، فیس، ٹور، رجسٹریشن، کتابوں وردیوں سے اعتماد اٹھنے پر لوگوں نے پرائیویٹ سکولوں کا رخ کیا۔ پرائیویٹ ان سے بھی دو قدم آگے نکلے، سکولوں میں کھیل کیلئے گراؤڈ نہیں۔ بچے صحت مند ہونے کی بچائے بیماریوں کا شکار، ہر چوتھے بچے کو نظر کی عینکیں لگی ہوئی ہیں ضلع میرپور میں 102 غیر رجسٹرڈ تعلیمی ادارے قانون نافذ کرنے والوں کو بے بس کیے ہوئے۔ انتظامیہ اور سکولز اتھارٹیز ان کے سامنے سربسجود۔ فیسوں کا کوئی شیدول نہیں من مانی فیس۔ تفصیلات کے مطابق آزادکشمیر کا نظام تعلیم عدم توجہ قانون شکنی کے باعث تباہی کے دھانے پر، نوجوان نسل غیر محفوظ، تعلیمی نظام میں اپنا مستقبل تاریک راہوں پر ہونے کے باوجود بھی خاموشی سے دلدل کی نظر ہورہا ہے۔ ضلع میرپور میں اس وقت 102 غیر رجسٹر تعلیمی ادارے بچوں کے مستقبل سے کھیل رہے ہیں۔ 300 کے قریب سکولوں کے باعث گراؤنڈ کی سہولت نہیں۔ حلقہ نمبر 1 ڈڈیال میں 14 ان رجسٹرڈ سکول جن میں 4عدد سیاکھ، 1 چھتروہ اوناع، رٹہ سورکھی، ڈیری قاسم چلایار، بلوح شامل ہیں۔حلقہ نمبر 2 چکسواری اسلام گڑھ میں 16 غیر رجسٹرڈ سکول پوٹھہ بینسی، اسلام گڑھ، کنیلی ڈھانگری بالا، فیض پور شریف ایسر پنڈ کلاں، چکسواری جبکہ حلقہ نمبر 3 میرپور میں 37 غیر رجسٹرڈ سکول جی ون، ایف ون، ایف تھری، پرانی چونگی، بندرال، ایف فور، سی ٹو، سی فون، فاضل چوک،سنگوٹ بھڑکے بی تھری، سانوالہ گوڑھا،کھاڑک، ایف ٹو میں بڑے سکول ریڈ فاؤنڈیشن B/4 کلیال B/5 میاں محمد ٹاؤن ایف تھری نیوسٹی، حلقہ نمبر 4 سموال شریف، رنگ پور، نیو لدڑ، افضل پور، پل منڈا، ساہنگ، جاتلاں، گورسیاں، نیو جبوٹ، گھسیٹ پور بڑی بانگ چترپڑی، منگلا میں 25 سے زائد سکول ان رجسٹرڈ ہونے کے باوجود کلاسیں بلا روک ٹوک جاری رکھے ہوئے سکولوں کیلئے شرائط ضوابط مقرر ہیں۔ رجسٹرڈ اور ان رجسٹرڈ سکول قواعد ضوابط بھی پورے نہ ہونے کے باوجود بھاری فیس وصول کرتے ہیں جن کا معیار نہ ہونے کے باعث تعلیمی نظام تباہی کا شکار ہے سرکاری سطح پر سکولوں کی حالت زار خراب ہونے سے عوام کا پہلے ہی سرکاری نظام تعلیم سے اعتماد اٹھ گیا تھا اب رہی کسر ان غیر رجسٹرڈ سکولوں نے نکال دی ہے۔