غسل میں عورت کن باتوں کا خیال رکهے

فرض غسل میں عورت کن باتوں کا خاص اہتما م کرے ؟جواب : فرض غسل میں عورت درج ذیل باتوں کا خاص اہتمام کرے ۔1۔ غسل طریقہ یہ ہے کہ پہلے ہاتھ دھوئے اور استنجاء کرے پھر بدن پر کسی جگہ نجاست لگی ہو۔ اسے دھوڈالے ۔ پھر وضو کر لے ۔2۔ غسل میں تین چیزیں فرض ہیں ۔ 1۔کلی کرنا 2۔ناک میں پانی ڈالنا 3، پورے بدن پر پانی بہانا3۔ بیٹھ کر نہائیں اس میں پردہ زیادہ ہے ۔4۔ اگر سر کے بال کھلے ہوں تو سب بالوں کو بھگونا اور جڑوں میں پانی پہنچانا فرض ہے ایک بال بھی سوکھا رہ گیا تو غسل نہ ہوگا۔5۔ نتھ

،بالیوں ، انگوٹھی ۔ اور چھلوں کو تنگ ہونے کی صورت میں خوب ہلائیں تاکہ پانی سوراخوں میں پہنچ جائے ۔6۔اگر بالیاں نہ پہنی ہوں تو احتیاطا سوراخوں میں پانی ڈال لے ۔7۔اگر بالوں میں گوند افشان لگی ہو تو دھو ڈالے کیونکہ بالوں کی جڑوں میں پانی پہنچانا واجب ہے ورنہ غسل نہ ہوگا ۔8۔اگر ناخن وغیرہ میں آٹا لگ کر سوکھ گیا تو پہلے صاف کرے ورنہ غسل نہ ہوگا ۔9۔اگر ناخنوں میں نیل پالش لگی ہو تو صاف کرے کیونکہ یہ بدن تک پانی بیچنے نہیں دیتی ۔ورنہ غسل نہ ہوگا۔“ولو کان شعرۃ المراۃ منقوضا یجب ایصال الماء الی ٰ اثناء ہ ۔” ( ھندیہ :1/ 14) بادشاہ اور وزیر. …… ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﯾﮏ ﻭﺯﯾﺮ۔ ﻭﺯﯾﺮ ﮨﺮ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﭘﺮ ﺑﮭﺮﻭﺳﮧ ﺍﻭﺭ ﺗﻮﮐﻞ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﮐﭩﯽ ﺍﻭﺭﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﺍ ﺧﻮﻥ ﺑﮩﺎ۔ ﺟﺐ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﯾﮧ ﻣﻨﻈﺮﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﮐﮩﺎ : ﺍﭼﮭﺎ ﮨﯽ ﮨﻮﮔﺎ ﺍﻧﺸﺎﺀ ﺍﻟﻠﮧ۔ ﺧﺪﺍ ﭘﺮبھﺮﻭﺳﮧ ﮐﺮﯾﮟ۔ﺟﺐ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺳﻨﺎ ﺗﻮ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮﻏﺼﮧ ﺍٓﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻻ : ﮐﯿﺴﮯ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﮔﺎ؟ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﺳﮯﺧﻮﻥ ﺑﮩﮧ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﮔﺎ۔ !ﺍﺱﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯﺣﮑﻢ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﺯﯾﺮ ﮐﻮ ﺟﯿﻞ ﺑﮭﯿﺞ ﺩﯾﺎﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﺍﭼﮭﺎ ﮨﯽ ﮨﻮﮔﺎ ﺍﻧﺸﺎﺀﺍﻟﻠﮧ۔ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺟﯿﻞ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ۔ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﮨﺮ ﺟﻤﻌﮧ ﮐﻮ ﺷﮑﺎﺭ ﮐﮭﯿﻠﻨﮯﺟﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﺟﻤﻌﮧ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺑﮍﮮ ﺟﻨﮕﻞﻣﯿﮟ ﺷﮑﺎﺭ ﮐﮭﯿﻠﻨﮯ ﮔﯿﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﯿﺎ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺩﻓﻌﮧ ﺟﻨﮕﻞ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﻟﻮﮒ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﺖ ﮐﯽ ﭘﻮﺟﺎﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﺍٓﺝ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﯿﺪ ﮐﺎ ﺩﻥ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺍﺱ ﺗﻼﺵ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯﺑﺖ ﮐﮯﻟﯿﮯ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﭘﯿﺶﮐﺮﯾﮟ۔ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺟﺐ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ کو ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﭘﮑﮍ ﮐﮯ ﻟﮯ ﺍٓﺋﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﺫﺑﺢ ﮐﺮ ﮐﮯﺑﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﮐﺴﯽ ﻧﮯﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﮐﭩﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺲﮐﯽ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﮐﭩﯽ ﮨﻮ ﻭﮦ ﻣﻌﯿﻮﺏ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽقرﺑﺎﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ۔ ﻟﮩﺬﺍ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯﻭﺯﯾﺮ ﮐﺎ ﺟﻤﻠﮧ ﯾﺎﺩ ﺍٓﮔﯿﺎ : ﺳﺐﮐﭽﮫ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﮔﺎ ﺍﻧﺸﺎﺀ ﺍﻟﻠﮧ۔ ﺷﮑﺎﺭ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﺍٓﮐﺮ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﻭﺯﯾﺮ ﮐﻮ ﺟﯿﻞ ﺳﮯﺍٓﺯﺍﺩ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﻼﯾﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﻭﺍﻗﻌﺎ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﮐﺎ ﮐﭩﻨﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﭼﮭﺎ ﺗﮭﺎ ﻭﺭﻧﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﻭﺯﯾﺮﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﻮﺍﻝ ﭘﻮﭼﮭﺎ : ﺟﺐ ﺗﻢ ﺟﯿﻞ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﮔﺎ ﺍﻧﺸﺎﺀ ﺍﻟﻠﮧ۔ ﺟﯿﻞ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﯿﺎ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﺍ؟ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ : ﻣﯿﮟ ﺍٓﭖ ﮐﺎ ﻭﺯﯾﺮ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍٓﭖﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﮔﺮ ﻣﯿﮟ ﺟﯿﻞ ﻧﮧ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﻮ ﺷﮑﺎﺭﮐﮯﺩﻥ ﺑﮭﯽ ﺍٓﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﺍﻭﺭﭼﻮﻧﮑﮧ ﻣﯿﺮﯼﺍﻧﮕﻠﯽ ﮐﭩﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺍٓﭖ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﻣﺠﮭﮯﺍﭘﻨﮯ ﺑﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﭼﮍﮬﺎﺗﮯ۔ ﭘﺲ ﺟﯿﻞ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﭻ ﮔﯿﺎ۔ : ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﮯ ﮨﺮ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻣﺼﻠﺤﺖﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﭘﺮ ﺑﮭﺮﻭﺳﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.


c99
bahelievler escort antalya escort ili escort esenyurt escort beylikdz escort avclar escort