’’علامہ خادم حسین رضوی کا جنازہ ہم میڈیا کیلئے منافقت کا جنازہ ہے کیونکہ۔۔‘‘ سینئر تجریہ حامد میر اجتماع دیکھ آگ بگولہ ہوگئے

لاہور (ویب ڈیسک) بے باک نڈر عالم دین ، ختم نبوتؐ کے نمبردار، توہین رسالت امن کے محافظ اور تحریک لبیک یا رسولﷺ کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی کا جسد خاکی نماز جنازہ کے مقام پر منتقل کیا جا رہا ہے۔ مینار پاکستان اور گریٹر اقبال پارک کا انتخاب کیا گیا۔ تاحد نگاہ عقیدت مندوں اور کارکنوں کا سمندر نظر آرہا ہے۔ حامد میر نے اپنے ٹوئٹ میں لکھا کہ

” پیمرا کی طرف سے ٹی وی چینلز کو کہا جا رہا ہےخادم رضوی کے جنازے کی لائیو کوریج نہ کی جائے جنازے کی لائیو کوریج روکنا آسان ہے کیونکہ ٹی وی چینلز کمزور ہیں ریاست اتنی ہی طاقتور ہے تو جنازے کو بھی صرف تین سو افراد تک محدود کر کے دکھاتی میڈیا پر ڈنڈا چلانے والے اپنے گریبان میں جھانکیں”. جو محبت کا اظہار کر رہے ہیں ، ہر آنکھ اس وقت اشکبار نظر آرہی ہے۔ سینئر تجزیہ کار حامد میر نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ یہ بہت بڑا اجتماع ہے۔ لیکن اس اجتماع میں جو لوگ شریک ہیں، ان کی اکثریت نے فیس ماسک نہیں پہنا ہوا۔ عقیدت اپنی جگہ پر ہے ، آنکھوں کا اشکبار ہونا اپنی جگہ پہ ہے، لیکن اس کے ساتھ ہی ساتھ ہزاروں لوگ اس اجتماع میں آئے ہیں، ہزاروں لوگوں نے ماسک نہیں پہنے ہوئے۔ انہیں اپنا اور اپنی فیملی کی صحت کا خیال رکھنا چاہیئے۔ اس پر میڈیا کو بھی اپنا کردار ادا کرنا چاہیئے۔ ہاتھ جوڑ کر ان سے ریکوسٹ کرنی چاہیئے کہ آپ جنازے میں شرکت ضرور کریں، آپ لیبک یا رسول اللہ کے نعرے ضرور لگائیں لیکن ماسک بھی پہن لیں اس سے اپ کی تھوڑی بہت بچت بھی ہو جائے گی۔ حامد میر نے مزید کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں یہ بہت بڑا اجتماع ہے۔ نماز جنازہ پڑھتے ہیں لوگ واپس چلیں جائیں گے، لیکن ایک بہت سوال پیچھے چھوڑ جائیں گے۔ اور وہ سوال یہ ہوگا کہ لاہور ضلعی انتظامیہ اور پنجاب حکومت اس جنازے کو فسلیٹیٹ کر رہی اور جسا کہ آپ کو چینل خود بھی بتا رہا ہے کہ سکیورٹی اہلکار بھی اس میں شریک ہیں، ان کو بھی کورونا وائرس لاحق ہوسکتا ہے۔ اگر یہ لوگ بھی وائرس کا شکار بن گئے تو کیا ہوگا؟۔ دوسری بات یہ ہے کہ اگر مینار پاکستان میں ایسے اجتماعات ہونے لگ گئے تو کیسز میں اضافہ ہوسکتا ہے۔ کمیٹی اجلاس میں کہا گیا تھا کہ کسی بھی جنازے میں تین سے زائد افراد شرکت نہ کریں۔ مگر ایہاں کو تعداد بہت زیادہ ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *


asp shell
bahelievler escort antalya escort ili escort esenyurt escort beylikdz escort avclar escort