حتیاط نہ کی تو دو ہفتوں میں کیسز کونسی خوفناک شکل  اختیار کرسکتے ہیں

حتیاط نہ کی تو دو ہفتوں میں کیسز کونسی خوفناک شکل  اختیار کرسکتے ہیں ؟ حکومت نے وارننگ جاری کر دی اسلام آباد(آن لائن )وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمرنے  نے کہا کہ اگر ہم نے کورونا وائرس کی روک تھام کے لیے احتیاط نہیں کی تو اگلے دو ہفتوں میں حالات خدا نخواستہ پھر اسی نہج پر چل جائیں گے جب جون میں وبا کی پہلی لہر کا عروج تھا،  انڈورریسٹورانٹس میں کھانے پینے پر پابندی عائد کردی ہے، لیکن کھلی جگہوں پر کھانے پینے کے اسٹال اور ڈھابوں پر کوئی پابندی نہیں ہوگی،

سکولوں میں چھٹیاں کردی گئیں، مساجد میں حفاظتی اقدامات کیلئے صوبے جید علمائ�  کرام کا اجلاس بلائیں گے، سیاست پر پابندی نہیں، لیکن سیاسی اجتماعات پر پابندی لگا دی ہے، کیونکہ کورونا پھیلا تو لوگوں کا روزگار سب سے زیادہ متاثر ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار  انہوں نے  این سی او سی کے اجلاس کے بعد معاون خصوصی ڈاکٹر فیصل سلطان کے ہمراہ میڈیا کو آگاہ کرتے ہوئے کیا ۔ اسد عمر نے کہا کہ    کورونا کی دوسری لہر انتہائی خطرناک ہے، عوامی مقامات پر ماسک پہننا لازمی ہے،قومی رابطہ کمیٹی پہلے نمبر پر سکول بند کرنے کی وزیرتعلیم شفقت محمود کی سفارشات قبول کرلی گئی ہیں، سکولوں کو بند کرنے کا فیصلہ آسان نہیں تھا،اس کی پوری تفصیلات این سی اوسی   صوبائی حکومتوں کو بھجوا دے گی۔ انہوں نے کہا  تعلیمی ادارے دو طریقوں سے چلیں گے، بچوں کے ہوم ورک کا کوئی طریقہ کار بنایا جائے گا تاکہ گھر میں ان کی پڑھائی چلتی رہے اور اس کی تفصیلات کا تعین صوبے کریں گے، ہر صوبہ اپنے حالات اور وسائل کے مطابق فیصلہ کرے گا۔  ان کا کہنا تھا کہ جن اسکولوں کے پاس آن لائن سہولت ہے وہ آزاد ہوں گے کہ وہ اپنی کلاسیں آن لائن جاری رکھ سکیں، 25 دسمبر سے 10 جنوری تک موسم سرما کی تعطیلات ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ اگر حالات ٹھیک رہے اور خطرناک ہوتی لہر پر ہم قابو پانے میں کامیاب ہوئے تو 11 جنوری تک اسکولوں کے کھلنے کا امکان ہے۔این سی او سی کے اجلاس سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ فیصلہ کیا گیا کہ بند کمروں کے اندر کھانے پینے کے

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.

boztepe escort
trabzon escort
göynücek escort
burdur escort
hendek escort
keşan escort
amasya escort
zonguldak escort
çorlu escort
escort ısparta